نجی شعبے کو کورونا ویکسین درآمد کی اجازت، مبینہ کرپشن کا میگا سکینڈل

اسلام آباد.ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے کورونا ویکسین کی درآمد سے متعلق ہوشربا انکشاف کردیئے ۔

نجی ٹی وی 92 نیوز کے مطابق ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے کہاہے کہ پاکستان میں نجی شعبے کو روسی ویکسین کی قیمت عالمی مارکیٹ سے 160 فیصد اضافی دی گئی ،ٹرانسپیرنسی نے اعتراض کرتے ہوئے کہاکہ نجی شعبے کو انتہائی مہنگے داموں کورونا ویکسین لگانے کی اجازت دی گئی،دنیا بھر میں حکومتیں اپنے عوام کو مفت کورونا ویکسین دے رہی ہیں ،پاکستان پہلا ملک ہے جس نے نجی شعبے کو کورونا ویکسین درآمد کی اجازت دی ۔

سینیٹ میں قائد حزب اختلاف کے انتخاب میں پیپلز پارٹی کی حمایت ، سراج الحق نے بلاول بھٹو زرداری کو کورا جواب دے دیا
ٹرانسپیرنسی کاکہناہے کہ نجی شعبے کو کورونا ویکسین درآمد کی اجازت کرپشن کا نیا دور کھولے گی ،خدشہ ہے سرکاری کورونا ویکسین نجی ہسپتالوں میں لگائی جائے گی ،عالمی ادارے کا مزید کہناہے کہ نجی شعبے کو کورونا ویکسین کی دو ڈوز کی قیمت8449 روپے دی گئی ہے ،نجی شعبے کو پاکستان نے 50 ہزار کورونا ویکسین درآمدکرنے کی اجازت دی ہے ۔

ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے اس حوالے سے وزیراعظم عمران خان کو خط بھی تحریر کیا جس میں وزیراعظم سے نجی شعبے کو ویکسین درآمد کی اجازت منسوخ کرنے کا مطالبہ کیاگیاہے، ٹرانسپیرنسی کاکہناہے کہ وفاقی حکومت کورونا ویکسین سے متعلق تمام معلومات مشتہرکرے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں