سرکاری ملازمین کا احتجاج ،اسلام آبادسیکریٹریٹ چوک میدان ’ جنگ ‘ بن گیا ، پولیس کی آنسو گیس کی شیلنگ

اسلام آباد .اسلام آباد میں پولیس نے تنخواہوں میں اضافے کیلئے احتجاج کرنے والے سرکاری ملازمین اور پولیس کے درمیان صورتحال کشیدہ ہو گئی ہے ، سیکریٹریٹ چوک میدان جنگ بن چکا ہے جہاں مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے آنسو گیس کی شیلنگ کی جارہی ہے ۔

تفصیلات کے مطابق پولیس نے احتجاج روکنے کیلئے کریک ڈاﺅن شروع کر دیاہے اور متعدد سرکاری ملازمین کو گرفتار کر لیاہے جبکہ آنسو گیس کی شیلنگ جاری ہے اور جواب میں ملازمین کی جانب سے بھی پولیس پر پتھراﺅ کیا جارہاہے ۔ملازمین کا کہناہے کہ جب تک چیف آرگنائزر آل پاکستان ایمپلائز گرینڈ الائنس رحمان باجوہ کو نہیں چھوڑا جائے گا اس وقت کوئی بات چی نہیں ہو گی ۔اسلام آبادسیکریٹریٹ اور وزیراعظم ہاﺅس کی جانب جانے والے راستوں کو بند کر دیا گیاہے ۔مظاہرین کی بڑی تعداد ڈی چوک میں جمع ہونا شروع ہو گئی ہے۔

پولیس نے سرکاری ملازمین کا دھرنا ناکام بنانے کیلئے پکڑ دھکڑ شروع کر دی تھی جس کے بعد احتجاج میں مزید تیزی آئی ہے ۔ واٹر کینن، اے پی سی اور پولیس کی بھاری نفری ڈی چوک اور سیکرٹریٹ پہنچا دی گئی۔ پولیس نے دھرنے کے 7 قائدین کو حراست میں لے لیا۔ گرفتار افراد میں چیف آرگنائزر آل پاکستان ایمپلائز گرینڈ الائنس رحمان باجوہ بھی شامل ہیں۔ سرکاری ملازمین کو سیکرٹریٹ کے گیٹ کے سامنے سے گرفتار کیا گیا۔

اس سے قبل پولیس نے رات گئے سرکاری ملازمین کے رہنماوں کے گھروں پر چھاپے مار کر متعدد مزدور رہنماوں کو حراست میں لیکر تھانے منتقل کر دیا۔ سی ڈی اے لیبر یونین کے جنرل سیکرٹری امان اللہ، چیئرمین اظہار عباسی، سی ڈی اے لیبر یونین کے جنرل سیکرٹری کو گزشتہ رات سرکاری گھر سے حراست میں لیا گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں